Hijab convo (in English and Urdu)


Beard convo here

Image

This post is now available in Urdu too Alhamdolillaah. Scroll down for Urdu. Jazakum Allaahu Khair. May Allaah SWT reward the people who contributed and did hard work for this, Aameen!

Fatima was opening her classroom’s cupboard to take out her abaya, when her friend Ayesha came to put some books there. It was their off time now, and everyone was preparing to go back home. As Fatima was straightening her abaya to put it on, Ayesha asked her

Ayesha: Do you wear it out of your own accord or does your family ask you for this?

Fatima: what? Oh, abaya? I do it willfully alhamdulilah. Come on Ayesha (smiling), do you think people can force me to do something i don’t myself want to do?

Ayesha: no, i know you are a sensible girl, but i think you are aware about the amount of harassment girls receive in our society.

Fatima: yeah, sadly, we are living in an environment where women are not safe. But (with a smile) what it has to do with my sweet little abaya?

Ayesha: actually, my heart bleeds when I see young girls kept into strict bounds by their family. I am not talking about you, you are an educated lot, but most of the religious families in our country, strictly forbid their daughters from going out, attending parties, or adorning themselves in public. They are like caged birds. How sad it is (with a serious face)

Fatima: hmmm, yes, we have a sad state of affairs in our country. Take this chair (pointing to a nearby chair while settling her on the one besides it). I hope you have no hurry to go home?

Ayesha: yeah don’t worry; baba said that he would come a bit late today.

Fatima: that’s good then. I myself am greatly perturbed about the situation of women in our country. So today let’s pour our hearts out.

Ayesha: Fatima, sometimes I wonder what you feel behind this veil.

Fatima: SATISFACTION!

Ayesha: what kind of satisfaction?

Fatima: this feeling gives me peace of mind that I am obeying Allah Almighty. Secondly, I feel that I am not an object on display, rather am like a pearl which is always enclosed in its shell.

Ayesha: Wow, great. A pearl in a shell. But Fatima, if you don’t mind, I wanna say that why do you think that a girl is only protected if she is in veil? Only then she is a pearl? Remember a pearl doesn’t remain in shell forever.

Fatima: you are absolutely right dear; we do come out of our shells…

Ayesha: when? I mean at some occasions do you stop covering yourself?

Fatima: yes sweety

Ayesha: oh, i didn’t know that.

Fatima: hahaha. Actually, you are misunderstanding me. i don’t cover myself up when I am with my mehram family members or my husband. You know Allah orders us to beautify ourselves for our husbands, and surely He will give us a reward for this. A teacher of mine says that there is always a little difference between a sin and a virtue. if prettifying ourselves for our husbands  is a virtue then doing the same for a non mehram is a sin.

Ayesha: right. But, I don’t do it for any non mehram, but for my own self. everyone wants to look good.

Fatima: very true. it’s in woman’s nature that she wants to look beautiful and wants to get admired too. However, if that desire gets fulfilled in our homes, then we will find no need to impress pubic. Like you, many girls are of the view that they embellish themselves not for people but for themselves. If we are doing it for ourselves then why don’t we confine it to our bedrooms or homes? Why do we need to get appointments from parlors and waste thousands of rupees before going to a party or a wedding? Whether we are doing all this to impress others or rather just to get satisfied that, yes i am beautiful, Allah has put us under some boundaries.

Ayesha: and which are those boundaries?

Fatima:

“And say to the believing women

–    that they should lower their gaze and guard their modesty;

–    that they should not display their beauty and ornaments except what (must ordinarily) appear thereof;

–    that they should draw their veils over their bosoms and not display their beauty except

–    to their husbands,

–    their fathers,

–    their husbands’ fathers,

–    their sons,

–    their husbands’ sons,

–    their brothers or

–    their brothers’ sons, or

–    their sisters’ sons,

–    or their women,

–    or the slaves whom their right hands possess,

–    or male servants free of physical needs,

–    or small children who have no sense of the shame of sex;

and that they should not strike their feet in order to draw attention to their hidden ornaments.

And O ye Believers! Turn ye al together towards Allah, that ye may attain Bliss.” (Surah Nur, verse no. 31)

This is the list of mehrams given in Quran, and our chacha, mamun are also mehram. We are not allowed to display our beauty in front of anyone except these.

Ayesha:  ya right. But this same verse says that ‘except what appear thereof’ and thus we can cover ourselves up except face, because revealing it is a normal thing. It is automatically revealed when we go outside.

Fatima: hmmm. Let me clarify myself. Verse no. 59 of Surah Ahzab says

” O prophet! Tell thy wives and daughters, and the believing women, that they should cast their outer garments over their persons (when abroad): that is most convenient, that they should be known (as such) and not molested: and Allah is Oft-Forgiving, Most Merciful.”

Now, these are the translated words of the verse, that’s why we take a wrong meaning if of it. A major problem with us Pakistanis is that we don’t understand Arabic, and thus gets knowledge from a secondary source, i.e. translations, which are not the exact words of Allah.

The word in this verse “jalaabibihinna” means ‘huwar rida u fauqal khimar’ a garment we wear over our dupattas or inner shawls. It shows that it is something we wear over our heads from above and that automatically covers our face as well.

Ayesha: right. But many renowned scholars today are of the view that covering the face is not necessary.

Fatima: they differ on this point that whether it is farz or mustahib. But no one denies that covering the face is liked by Allah and completes our pardah.

Ayesha: yeah that’s true but…

Fatima: wait, then you are agreeing that covering our heads is necessary?

Ayesha: ya i do agree, and i have read Surah Ahzab in matric.

Fatima: fantastic. But how sad it is that every one of us knows about this and yet we close our eyes from the reality.

Ayesha: actually Fatima, this world is so attractive, every time we think of Allah or His injunctions, one thing or the other distracts us and we keep on floating in this worldly mess, forgetting that we ever thought of Quran or its teachings.

Fatima: yeah. Unfortunately, we have compartmentalized our lives. We treat religion and world differently. What we are forgetting here is that our religion is a Deen, it’s a way of life. And how can we live if we don’t know how to live. Quran guides us in every sphere of our life but we ignore it and then plunge into miseries.

Ayesha: you are absolutely right. We are destroying ourselves with our own hands.

Fatima: exactly 😦 May Allah guide us. Oh we were discussing something about Hijab.

Ayesha: ya. We were discussing whether face covering is necessary or not.

Fatima: oh yes and many scholars differ on this. But yesterday, i was reading a hadith. It says that take ”ذؤات الخدؤر’‘too for Eid prayers. And what do you think khudur means? It means ‘hidden’ and just think logically that when a girl covers herself up fully except face, will you say that she is hidden or khudur.

Ayesha: hmmm i think no

Fatima: and do you think that a, woman who is covered from head to toe including her face is hidden?

Ayesha: yes

Fatima: then you are agreeing that according to this hadith which is there in both Sahih Bukhari and Sahih Muslim(1), women used to cover their faces at the time of the prophet ( peace be upon him)?

Ayesha: according to what you have said, yes i agree.

Fatima: then this is the same Deen. Why can’t we do that today?

Ayesha: but today, we have many problems. The very first problem highlighted by our parents is that no guy will marry us if we start doing hijab hahaha even I don’t agree with this. Secondly, (getting serious) that’s my personal opinion, before doing hijab first we have to be good from inside, it’s a big change, at least for me, and I don’t feel comfortable like, frankly, I…

Fatima: sorry i am cutting your sentence, inside and outside? A sincere person is all equal and same from inside out. If one person is good then not only his heart is good but his outer appearance is also modest and neat. If the inside and outside arent in line and are different then that person isnt sincere, not to others and not to himself even! Outside appearance also includes the actions we do, our deeds. And remember one thing, our inside motivates our outside, and our outside motivates our inside! A girl with hijab would think ten times before doing any immoral thing because the fingers would rise not only on her but on her hijab too and ultimately on her religion, similarly a sincere and strong faith in heart makes it very easy to do good deeds despite of many hardships. For example doing hijab or, in case of guys, keeping a beard. So the thing is that we have to keep both, our inside and outside, in line and positive. It’s always about the first step. One bold step can change entire life, and trust me it’s not difficult because Allaah SWT says in Hadith Qudsi that When a servant walks towards me I run towards him. And in another narration Allaah SWT says that if a servant comes one step closer to me, I come 10 steps closer to him! So what else we need except to take one step and Allaah is all ready to help? SubhanAllaah!

Ayesha: (listening attentively, tears in eyes)

Fatima: and to improve your inside at the same time you need Word of Allaah SWT, Quran! Read Quran with translation so that you understand it. The best thing is to learn Arabic but at least read translation for now. Understand what does our Lord want from us, whats the purpose of all this, where does this all leads to. Ayesha is this difficult to do? Look at me, you cant see my inside, you don’t know whether I read Quran or not but you can clearly see that I do hijab and I follow Allaah’s Orders as much as I could, don’t you think that if only one girl can do it today, it means others can do it as well?

Ayesha: hmmm… (Couldn’t say anything else)

Fatima: then see, how many girls cover themselves completely today inspite of many hindrances and problems. They know that it’s the order of their Lord and they have to obey Him, in order to earn Jannah.

Ayesha: (in low voice) I totally agree with you. The problem is these differing opinions confuse us a lot.

Fatima: leave everything. Just keep it in mind that on the Day of Judgment when we will be in need of even an inch of a virtue, when even the prophets will be trembling because of Allah’s rage and fathers will not identify their sons ” Surah Haj verse no. 2”. Then we will regret for plunging in this debate that whether parda is Farz or not and not doing it only because of our confused state of minds. Forget about what people say, forget about the hardships of this world, and just think of Allah’s Jannah, which is beyond our imagination and the beauty which no eye can witness in this world.

Ayesha: (with tears) Fatima, I want to enter into Allah’s Jannah and I want to do everything He says, BUT you know this world, people don’t encourage us when we try to obey Allaah and Shaitan keeps on using his tactics as well.

Fatima: (rubbing her tears away) Don’t worry, you know, together we can make a difference. I agree that it’s difficult for a single being to do something which is not being done by others around us, but when we find ourselves among people who are obeying Allah then everything becomes easy, then we gain such strength which can help us in breaking rocks and mountains. And about the marriage thing, I really laugh at that argument. Aren’t hijabi girls getting married?

Ayesha: (ignoring the question) how lucky you are that you are born in such a family where you can easily practice Allah’s orders.

Fatima: Ayesha, before saying anything further, thank Allah Almighty that you are born in a Muslim Family.

Ayesha: ya, thank you Allah, thank you so much (with a smile on her teary face)

Fatima: that’s it, you should be thankful to Allah that you have found light. You already know that our Creator loves us more than 70 mothers so whatever He orders, it’s for our own benefit. But you need help, and me and many sisters like me are here to uplift you from this mess. Don’t worry and trust Allaah

Ayesha: yes In sha Allaah. Thank you so much Fatima. May Allah Bless you. From now on, I will start reading Quran and will try to understand it. And please help me in start taking Hijab.

Fatima: don’t worry a bit dear. We will buy one according to your taste and never forget that now we are one in this journey towards Heaven

Ayesha: (hugs her) and In Shaa Allah, one day we will be together besides the lake of shining waters and hanging fruits, in our transparent silk gowns and pearls, for ever and ever

Fatima: In Shaa Allah .

Reference:

1-Lulu Wal Marjan Vol. 1, hadees no. 511

 

فاطمہ کلاس کی الماری سے اپنا عبایہ نکال ہی رہی تھی کہ اس کی سہیلی عائشہ اپنی کتابیں رکھنے وہاں آئی۔ ان کی کلاس ختم ہو چکی تھی اور سب اپنے گھر جانے کی تیاری کر رہے تھے۔ فاطمہ اپنے عبایہ کو پہننے ہی والی تھی کہ عائشہ نے اس سے اچانک یہ پوچھ لیا۔
عائشہ: تم یہ عبایہ اپنی مرضی سے پہنتی ہو یا تمہارے گھر والے تمہیں مجبور کرتے ہیں?
فاطمہ: کیا? عبایہ? الحمد للہ میں یہ اپنی مرضی سے پہنتی ہوں۔ (مسکراتے ہوئے) عائشہ! کیا تم یہ سمجھتی ہو کہ لوگ مجھ سے زبردستی کوئی کام کروا لیں گے جب میں ہی وہ کام نہ کرنا چاہوں?
عائشہ: نہیں، نہیں، مجھے معلوم ہے کہ تم ایک سمجھدار لڑکی ہو، مگر تمہیں معلوم نہیں ہمارے معاشرے میں لڑکیوں کو کس قدر تنگ کیا جاتا ہے!
فاطمہ: بالکل، افسوس کہ ہم ایک ایسے معاشرے میں رہ رہے ہیں جہاں خواتین محفوظ نہیں۔ مگر، (پھر مسکرا کر) اس کا میرے اس خوبصورت سے عبایہ سے کیا لینا دینا?
عائشہ: دراصل جب میں یہ دیکھتی ہوں کہ جوان لڑکیوں کو ان کے گھر والے قید کر کے رکھتے ہیں تو میرا دل خون کے آنسو روتا ہے۔ میں تمہاری بات نہیں کر رہی، تم تو پڑھی لکھی ہو۔ مگر بہت سے مذہبی گھرانوں میں، لڑکیوں کو گھر سے باہر جانے، دعوتوں میں شریک ہونے اور بننے سنورنے سے سختی سے روکا جاتا ہے۔ پرندوں کی طرح قیدی بنا لیا ہے۔ (سنجیدہ ہوتے ہوئے) یہ کتنے افسوس کی بات ہے!
فاطمہ: صحیح کہتی ہو۔ ہمارے ملک کا حال بہت برا ہے۔ (قریب ایک کرسی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے) آؤ بیٹھو۔ تمہیں ابھی جلدی تو نہیں ہے?
عائشہ: نہیں نہیں، ابو آج تھوڑی دیر سے آئیں گے۔
فاطمہ: چلو یہ تو اچھا ہے۔ میں بھی اپنے ملک میں عورتوں کی حالت زار پر رنجیدہ ہوں۔ آج ذرا اس پر بات کر لیتے ہیں۔
عائشہ: فاطمہ، میں کبھی یہ سوچتی ہوں کہ اس پردہ کے پیچھے تم کیسا محسوس کرتی ہو گی۔
فاطمہ: پر سکون۔
عائشہ: کیسا سکون?
فاطمہ: اس بات کا کہ میں اللہ تعالی کی فرمانبرداری کر رہی ہوں۔ دوسرا اس بات کا احساس کہ دنیا کی نگاہوں میں میں کوئی نمائش میں رکھی چیز نہیں ہوں بلکہ میں ایک ہیرا ہوں جو اپنے خول کے اندر چھپا محفوظ رہتا ہے۔
عائشہ: واہ کیا بات ہے۔ خول میں بند ہیرا! مگر فاطمہ، اگر برا نہ مانو تو آخر تم یہ کیوں سمجھتی ہو کہ ایک لڑکی تب ہی محفوظ ہو گی جب وہ باپردہ ہو? کیا وہ صرف تب ہی ایک ہیرا ہے? اور کیا ہیرا بھی اپنے خول سے باہر نہیں نکلا کرتا?
فاطمہ: صحیح کہا میری پیاری دوست۔ ہم بھی اس خول سے باہر نکلتے ہیں۔۔۔۔۔
عائشہ: کب? میرا مطلب ہے کیا تم بعض اوقات پردہ کے بغیر بھی ہوتی ہو?
فاطمہ: بالکل میری پیاری سہیلی!
عائشہ: اچھا! مجھے تو یہ معلوم نہ تھا۔
فاطمہ: (ہنستے ہوئے) دراصل تم سمجھی نہیں۔ میں خود کو محرم رشتہ داروں یا اپنے شوہر کے سامنے تھوڑی چھپٌاتی ہوں۔ کیا تمہیں معلوم ہے کہ اللہ نے ہمیں اپنے شوہروں کے سامنے بننے سنورنے کا حکم دیا ہے، اور ان شاء اللہ ایسا کرنے پر ہمیں اجر بھی ملے گا۔ میری ایک ٹیچر کہتی ہیں کہ گناہ اور ثواب میں معمولی سا فرق ہے۔ جیسے اگر شوہر کے سامنے بناؤ سنگھار باعث ثواب ہے تو یہی عمل نا محرم کے سامنے کرنے پر گناہ ملے گا۔
عائشہ: اچھا۔ مگر میں بناؤ سنگھار نا محرم کے لئے تھوڑی کر کے نکلتی ہوں بلکہ یہ تو میں اپنے لئے کرتی ہوں۔ آخر ہر کوئی اچھا دکھنا پسند کرتا ہے۔
فاطمہ: صحیح کہا۔ عورت فطری طور پر بننا سنورنا اور دوسروں کو متاثر کرنا چاہتی ہے۔ لیکن اگر ہماری یہ خواہش ہمارے گھر ہی میں پوری ہو جائے تو پھر ہمیں غیروں کو متاثر کرنے کی ضرورت نہ ہو۔ تمہاری طرح بہت سی لڑکیاں یہی کہتی ہیں کہ وہ یہ بناؤ سنگھار صرف اپنے لئے کرتی ہیں۔ اگر ہم یہ اپنے لئے ہی کر رہے ہیں تو یہ تو اپنے گھر میں بھی ہو سکتا ہے۔ آخر ہمیں شادی یا دیگر تقریبات میں جانے سے پہلے پارلر جا کر ہزاروں روپے برباد کرنے کی ضرورت کیوں پڑتی ہے? چاہے ہم یہ دوسروں کو دکھانے کے لئے کر رہے ہوں یا اپنی تسلی کے لئے کہ ہم خوبصورت ہیں، یاد رکھو اللہ نے ہمیں کچھ حدود کا پابند بنایا ہے۔
عائشہ: اور ان حدود سے تمہاری مراد کیا ہے?
فاطمہ:
اور مومن عورتوں سے بھی کہہ دو کہ وہ بھی اپنی نگاہیں نیچی رکھا کریں اور اپنی شرم گاہوں کی حفاظت کیا کریں اور اپنی آرائش (یعنی زیور کے مقامات) کو ظاہر نہ ہونے دیا کریں مگر جو ان میں سے کھلا رہتا ہو۔ اور اپنے سینوں پر اوڑھنیاں اوڑھے رہا کریں
اور اپنے خاوند
اور باپ
اور خسر
اور بیٹیوں
اور خاوند کے بیٹوں
اور بھائیوں
اور بھتیجیوں
اور بھانجوں
اور اپنی (ہی قسم کی) عورتوں
اور لونڈی غلاموں کے سوا
نیز ان خدام کے جو عورتوں کی خواہش نہ رکھیں
یا ایسے لڑکوں کے جو عورتوں کے پردے کی چیزوں سے واقف نہ ہوں
(غرض ان لوگوں کے سوا) کسی پر اپنی زینت (اور سنگار کے مقامات) کو ظاہر نہ ہونے دیں۔ اور اپنے پاؤں (ایسے طور سے زمین پر) نہ ماریں (کہ جھنکار کانوں میں پہنچے اور) ان کا پوشیدہ زیور معلوم ہوجائے۔ اور مومنو! سب خدا کے آگے توبہ کرو تاکہ فلاح پاؤ
(سورہ النور: 31)
یہ ہے محرم رشتہ داروں کی تفصیل قرآن میں، اس کے علاوہ چچا اور ماموں بھی محرم ہیں۔ اس کے علاوہ کسی اور کے سامنے بے پردہ ہونا جائز نہیں۔
عائشہ: وہ تو ٹھیک ہے، مگر اسی آیت میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ‘سوائے اس کے جو خود ظاہر ہو جائے‘، تو اس طرح ہم اپنے چہرے کو کھلا چھوڑ سکتے ہیں، کیونکہ اس کا ظاہر ہونا ایک عام بات ہے۔ جب ہم باہر جاتے ہیں تو یہ تو خود ہی ظاہر ہو جاتا ہے۔
فاطمہ: ذرا میں اپنی بات واضح کر دوں۔ سورۃ احزاب کی آیت 59 سنو۔
اے پیغمبر اپنی بیویوں اور بیٹیوں اور مسلمانوں کی عورتوں سے کہہ دو کہ (باہر نکلا کریں تو) اپنے (مونہوں) پر چادر لٹکا (کر گھونگھٹ نکال) لیا کریں۔ یہ امر ان کے لئے موجب شناخت (وامتیاز) ہوگا تو کوئی ان کو ایذا نہ دے گا۔ اور خدا بخشنے والا مہربان ہے
(سورہ احزاب: 59)
اب یہ صرف ترجمہ کے الفاظ ہیں جس سے ہم غلط مطلب نکال لیتے ہیں۔ ہم پاکستانیوں کا مسئلہ ہی یہ ہے کہ عربی ہمیں سمجھ نہیں آتی، اور ہم مجبور ہوتے ہیں کہ ہم دوسرے ذریعہ یعنی ترجمہ سے قرآن پڑھیں، جو اللہ کے الفاظ کے بجائے مترجم کی ترجمانی ہوتی ہے۔
لفظ جلابیب ایک ایسے کپڑے کو کہتے ہیں جو ہم دوپٹے یا چادر کے اوپر الگ سے پہنتے ہیں۔ ایک ایسی چادر سر کے اوپر سے آئے اور ظاہر ہے اس سے چہرہ خود بخود چھپ جائے گا۔
عائشہ: مگر بہت سے بڑے علماء کے مطابق چہرے کا پردہ لازمی نہیں!
فاطمہ: ان کا اختلاف اس بات پر ہے کہ چہرے کا پردہ فرض ہے یا نہیں۔ مگر کوئی بھی یہ نہیں کہتا کہ چہرے کا پردہ اللہ کو پسند نہیں۔
عائشہ: ہاں یہ تو ہے مگر۔۔۔
فاطمہ: رکو، تو کیا تم اس بات پر متفق ہو کہ چہرہ چھپانا لازمی ہے?
عائشہ: ہاں، اور میں نے میٹرک میں سورۃ احزاب بھی پڑھی تھی۔
فاطمہ: زبردست! مگر افسوس کہ ہم سب جانتے ہوئے بھی انجان بن جاتے ہیں۔
عائشہ: فاطمہ، اصل میں یہ دنیا اتنی پر رونق ہے کہ جب بھی ہم اللہ اور اس کے احکامات پر عمل کا سوچتے ہیں، کوئی نہ کوئی چیز ہمیں اس سے دور لے جا کر دوبارہ دنیا کی رونقوں میں بہا لے جاتی ہے۔
فاطمہ: بالکل۔ اور ساتھ ہی ہم نے اپنی زندگی کو الگ الگ خانوں میں تقسیم کر دیا ہے۔ دین الگ اور دنیا الگ۔
عائشہ: تم نے صحیح کہا۔ ہم اپنے ہی ہاتھوں خود کو تباہ کر رہے ہیں۔
فاطمہ: بالکل۔ اللہ ہدایت دے۔ ہاں تو ہم حجاب کی بات کر رہے تھے۔
عائشہ: ہاں۔ ہم بات کر رہے تھے کہ چہرے کا پردہ ضروری ہے یا نہیں۔
فاطمہ: ارے ہاں! تو بہت سے علماء کا اس پر اختلاف ضرور ہے۔ مگر کل ہی میں نے ایک حدیث پڑھی۔ جس میں لکھا تھا کہ اپنی ذوات الخدور کو بھی عید گاہ لے کر جاؤ۔ تمہیں پتہ ہے ذوات الخدور کا کیا مطلب ہے? چھپی ہوئی۔ اور عقلی لحاظ سے بھی جب ایک لڑکی اپنا چہرہ کھلا رکھے گی تو کیا تم اسے چھپا ہوا کہو گی?
عائشہ: میرے خیال میں نہیں۔
فاطمہ: اور ایک عورت جو سر سے پاؤں تک پردہ میں ہو وہ۔۔۔?
عائشہ: ہاں وہ چھپی ہی کہلائے گی۔
فاطمہ: تو گویا تم بخاری ومسلم کی اس حدیث کے بارے میں یہ مانتی ہو کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے وقت کی خواتین اپنا چہرہ بھی چھپاتی تھیں?
عائشہ: تمہاری بات کے مطابق، ہاں میں مانتی ہوں۔
فاطمہ: تو میری بہن یہ دین آج بھی تو وہی ہے۔ پھر آج بھی ہم اس پر عمل کیوں نہ کریں?
عائشہ: مگر آج تو اور بھی بہت سے مسئلے ہیں۔ پہلا جو ہمارے والدین کہتے ہیں کہ اگر ہم پردہ کرنے لگیں گی تو ہماری شادی نہیں ہو گی۔۔۔ ہاہاہا! ویسے یہ تو میں بھی نہیں مانتی۔ دوسرا میری ذاتی رائے یہ ہے کہ حجاب کرنے سے پہلے ہمیں اپنا باطن صاف کرنا چاہئے۔ یہ بھی ایک بڑی تبدیلی ہو گی۔ کم سے کم میرے لئے۔۔۔ جو۔۔۔ یعنی سچ پوچھو تو۔۔۔
فاطمہ (عائشہ کی بات کاٹتے ہوئے): قطع کلامی معاف، مگر میرے نزدیک ایک مخلص شخص اندر اور باہر سے ایک جیسا ہی ہوتا ہے۔ اگر کسی کا دل پاک ہے تو لازما وہ ظاہری لحاظ سے بھی باحیا ہو گا۔ اگر یہ دونوں ایک جیسے نہیں تو ایسا شخص مخلص نہیں ہو سکتا، نہ اپنے لئے اور نہ کسی اور کے لئے۔ ظاہری چال ڈھال میں ہمارے اعمال بھی شامل ہوتے ہیں۔ اور ایک بات یاد رکھنا، ہمارا باطن ہمارے ظاہر کو متاثر کرتا ہے اور ظاہر ہمارے باطن کو! ایک باحجاب لڑکی کوئی غلط کام کرنے سے پہلے دس بار سوچے گی کیونکہ انگلیاں صرف اس پر نہیں بلکہ اس کے حجاب اور اس کے دین پر بھی اٹھیں گی۔ اسی طرح مضبوط ایمان سے نا اچھے کام کرنا آسان ہو جاتا ہے۔ جیسے ہمارا حجاب کرنا یا لڑکوں کا داڑھی رکھنا۔ تو اصل میں ہمیں ان دونوں کو اہمیت دینی ہے، یعنی اپنے ظاہر اور باطن کو۔ ہاں، پہلا قدم ہمیشہ مشکل ہوتا ہے۔ مگر ایک مشکل قدم، پوری زندگی بدل سکتا ہے۔ اور مجھ پر بھروسہ کرو، یہ مشکل بھی نہیں ہے۔ کیونکہ اللہ خود ایک حدیث قدسی میں فرماتا ہے کہ جب ایک بندہ اس کی طرف چل کر آتا ہے تو اللہ اس کی طرف دوڑ کر آتا ہے اور ایک اور روایت میں ہے کہ جب کوئی بندہ اس سے ایک قدم قریب آتا ہے تو اللہ اس سے دس قدم قریب آتا ہے۔
(عائشہ غور سے سنتی رہتی ہے اور آنکھوں میں آنسو جاری ہو جاتے ہیں)
فاطمہ: اور جہاں تک ہمارے باطن کی بات ہے تو اس کی اصلاح کے لئے ہمیں ضرورت ہے اللہ کے کلام یعنی قرآن کی۔ قرآن کو ترجمہ کے ساتھ پڑھو تاکہ سمجھ آئے۔ سب سے اچھا تو یہی ہے کہ عربی سیکھی جائے لیکن کم از کم ابھی ترجمے سے ہی شروع کرو۔ اور دیکھو کہ ہمارا رب ہم سے کیا چاہتا ہے۔ اس زندگی کا مقصد کیا ہے اور یہ کہ اس سب کا اختتام کیا ہو گا۔ عائشہ کیا یہ سب مشکل ہے? مجھے دیکھو۔ تم یہ تو نہیں جان سکتی کہ میں قرآن پڑھتی ہوں یا نہیں لیکن تم یہ تو دیکھ سکتی ہو جو تمہارے سامنے ہے کہ میں پردہ کرتی ہوں اور اللہ کی اطاعت کرنے کی کوشش کرتی ہوں۔ تو اگر ایک بھی لڑکی یہ کر سکتی ہے تو کیا سب یہ نہیں کر سکتے?
عائشہ: (اثبات میں سر ہلانے کے سوا اور کچھ نہیں کہہ پاتی ہے۔)
فاطمہ: تو ذرا دیکھو، کتنی لڑکیاں ہیں جو آج رکاوٹوں کے باوجود مکمل پردہ کرتی ہیں۔ وہ جانتی ہیں کہ یہ ان کے رب کا حکم ہے، اور ان کو اسے ماننا ہے تاکہ جنت کی نعمت حاصل کریں۔
عائشہ: (ہلکی آواز میں) یہ تو میں مانتی ہوں، مگر مسئلہ یہ ہے کہ یہ مختلف نظریات ہمیں شک میں مبتلا کر دیتے ہیں۔
فاطمہ: سب چھوڑو۔ صرف یہ دیکھو کہ روز قیامت ہم ایک چھوٹی سی نیکی کی بھی قدر کریں گے، جس دن انبیاء بھی اللہ کے جلال کی وجہ سے فکر مند ہوں گے، اور باپ کو اپنے بیٹے کی بھی فکر نہیں ہو گی بلکہ صرف اپنی (سورہ حج آیت 2)۔ اس وقت ہمیں افسوس اور دکھ ہو گا کہ ہم اس بحث میں پڑے رہے کہ پردہ فرض ہے یا نہیں۔ بھول جاؤ کہ دنیا کیا کہتی ہے اور بھول جاؤ کہ دنیا میں کیا مشکل پریشانیاں ہیں، صرف اس جنت کا تصور کرو جو ہمارے فہم سے بالاتر ہے اور ایسی حسین کہ کسی آنکھ نے نہ دیکھا ہو۔
عائشہ: (روتے ہوئے) فاطمہ میں چاہتی ہوں کہ اللہ کی ہر بات مانوں اور جنت ملے، مگر لوگ حوصلہ افزائی ہی نہیں کرتے جب ہم کوئی اچھا کام کریں اور ساتھ ہی شیطان بھی اپنی چالیں چلتا رہتا ہے۔
فاطمہ: (عائشہ کے آنسو پونچھتے ہوئے) گھبراؤ نہیں۔ ہم مل کر بہت کچھ کر سکتے ہیں۔ اکیلے کوئی کام کرنا آسان نہیں ہوتا جب ساتھ کوئی اور وہ کام نہ کر رہا ہو۔ لیکن جب ہم ایسے لوگوں کی صحبت اختیار کرتے ہیں جو اللہ کی فرمانبرداری میں زندگی گزار رہے ہوں، تو ہمیں ایسی طاقت مل جاتی ہے کہ پہاڑوں کو بھی روندا جا سکتا ہے۔ رہی شادی والی بات تو مجھے اس پر ہنسی آتی ہے۔ کیا حجابی لڑکیوں کی شادی نہیں ہوتی?
عائشہ: (سوال کو نظر انداز کرتے ہوئے) تم کتنی خوش قسمت ہو کہ ایک ایسے گھر میں رہتی ہو جہاں اللہ کے احکام پر آسانی سے عمل کر لیتی ہو۔
فاطمہ: عائشہ، کچھ کہو اس سے پہلے تم اللہ کا شکر ادا کرو کہ تم ایک مسلم گھرانے میں پیدا ہوئی ہو۔
عائشہ: (اشک بار آنکھوں کے ساتھ مسکراتے ہوئے) بالکل الحمد للہ، اے اللہ تیرا لاکھ شکر ہے!
فاطمہ: تو بس، پھر تمہیں اللہ کا شکر ادا کرنا چاہئے کہ تمہیں ہدایت ملی۔ اور تم جانتی ہو کہ وہ 70 ماؤں سے زیادہ پیار کرتا ہے، تو یہ ہمارے اپنے ہی فائدہ کے لئے ہے۔
عائشہ: ہاں ان شاء اللہ۔ فاطمہ تمہارا بہت شکریہ! اللہ تمہیں خوش رکھے۔ آج سے میں قرآن بھی پڑھوں گی اور اسے سمجھنے کی بھی کوشش کروں گی۔ اور مجھے حجاب لینے کے لئے تمہاری مدد کی ضرورت ہے۔
فاطمہ: بالکل فکر نہ کرو! تمہاری پسند کا حجاب خریدیں گے اور یہ بھولنا نہیں ہے کہ جنت کی جانب اس سفر میں اب ہم ایک ہیں!
عائشہ: (گلے لگاتے ہوئے) اور ان شاء اللہ ایک دن بہتی ہوئی نہروں اور پھلوں کے سائے میں جنت کے ریشمی لباس میں ہم ہمیشہ ساتھ رہیں گے۔
فاطمہ: ان شاء اللہ!

Advertisements

10 comments on “Hijab convo (in English and Urdu)

  1. Pingback: Ammi tou kehti hain shaadi bhi nahi honi! « abuwhy

  2. May Allah strengthen our Emaan to such an extent that following Allah’s commands become a pleasure and a way of satisfaction for us. Ameen

  3. Also, please when you write urdu akhi , kindly bold that because i think this theme is not that mush supported for urdu writing. (i had the same problem once)
    pointing out because it is hardly readable like this.. I don’t know if it is already being bolded.

    • Assalaam U Alaykum sister. Jazakum Allaahu Khair for suggestion. The urdu text have been bolded now. Kindly see if its readable easily now otherwise I hope changing theme doesnt require loads of time which I dont have unfortunately.

      looking forward for more suggestions
      Wassalaam U Alaykum WR WB

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s